Poverty Essay in Urdu

غربت | غربت کا خاتمہ | سی ایس ایس کے مضامین

ایک کثیر جہتی رجحان، غربت کا خاتمہ سادہ سماجی زندگی کی تمام بنیادی ضروریات کی کمی سے نمٹنا ہے۔

یہ بھی مربوط اقتصادی پالیسیوں پر مبنی ہے۔ غربت کے خاتمے کے لیے بنائی گئی پالیسیاں بھی معیشت کو اوپر کی جانب متحرک کرنے میں معاون ہیں۔

غربت عالمی سطح پر پھیلنے والا موضوع ہے جو بہت زیادہ تشویش کا باعث ہے کیونکہ غربت کا خاتمہ خوشحالی کی صبح کی طرف لے جائے گا۔

غربت پر قابو پانے کے لیے خیرات کوئی ٹھوس حل نہیں ہے۔ انسانی حقوق کا تحفظ ہونا چاہیے۔ یہ ہمیں ترقی کی راہ کی طرف لے جائے گا کیونکہ غربت کوئی قدرتی اشارے نہیں ہے۔ یہ انسان کے ذریعہ چلایا جاتا ہے اور اسے ختم کیا جاسکتا ہے۔

غربت انقلاب اور جرم کی ماں ہے۔

بھوک، غربت اور غذائی قلت کے خلاف لڑ کر قومیں خوشحال اور انقلاب برپا کرتی ہیں۔

غربت کے اسباب:
غربت کے نتیجے میں اہم پہلو ہیں۔

تعلیم کی کمی
خالص پانی اور غذائیت کا ناقص جائزہ
وسائل کی کمی
روزگار کے مواقع کی کمی
حکومت کی ناقص پالیسیاں
تعلیم کی کمی:
تعلیم ہی وہ ہتھیار ہے جو غربت کو ختم کر سکتا ہے۔ چونکہ غربت ایک عالمی مسئلہ ہے اور پوری دنیا میں پھیلی ہوئی ہے۔ تمام ریاستیں دہائیوں سے اس سے چھٹکارا پانے کے لیے مقابلہ کر رہی ہیں۔

’’چائلڈ لیبر اور غربت لازماً ایک دوسرے سے جڑے ہوئے ہیں اور اگر آپ بچوں کی مزدوری کو غربت کی سماجی بیماری کے علاج کے طور پر استعمال کرتے رہیں گے تو آپ کے پاس آخر وقت تک غربت اور چائلڈ لیبر دونوں ہی ہوں گے۔‘‘

– گریس ایبٹ، سماجی کارکن
تعلیم کی کمی جہالت کو جنم دیتی ہے۔ مہارت اور شعور کی کمی کم آمدنی کا سبب بنتی ہے جس کی وجہ سے فرد اپنی بنیادی سماجی ضروریات پوری نہیں کر پاتا۔

افراد کو تعلیم دے کر، نوجوان اپنے روشن اور خوشحال مستقبل کے لیے آگے بڑھنے کے لیے سنگ میل عبور کر سکتے ہیں۔

غریب ممالک میں ناخواندگی کی شرح 80 فیصد سے زیادہ ہے۔ ناخواندگی معاشی تفاوت کے لیے انتباہی علامت ہے کیونکہ تعلیم معاشی پالیسیوں کی عدم مساوات کو نیویگیٹ کرتی ہے۔

پانی اور غذائیت کی کمی:
صاف پانی اور بہترین کھانا ہر انسان کا حق ہے۔ کچھ ریاستیں اپنے باشندوں کے لیے پانی اور خوراک کی کمی سے نمٹنے میں ناکام ہیں۔

خالص خوراک ہر ریاست کا فرض ہے کیونکہ بعض ممالک میں لوگ خوراک کی ضروریات پوری کرنے کے لیے پیسے کمانے کے لیے اتنے بے بس ہیں۔

معاشی پالیسیاں ہر حکومت کی اولین ترجیح ہوتی ہیں۔

ہر حکومت کا فرض ہے کہ وہ اپنی درآمدات اور برآمدات کی پالیسیوں کو بہتر بنائے تاکہ ایک سیزن کے لیے کافی مقدار میں خوراک کا ذخیرہ ہو۔

حکومتوں کو قیمتیں کم کرنی چاہئیں تاکہ ہر طبقے کے لوگ اشیائے خوردونوش خرید سکیں۔

وسائل کی کمی
ملکوں کے پاس خوراک اگانے کے لیے زمینیں تو ہو سکتی ہیں لیکن ان کے پاس وسائل کی کمی ہے کہ کس طرح کامل مقدار میں فصلیں اگائی جائیں؟

کچھ ریاستیں زرخیز زمین یا خوراک کی صنعتوں کے لیے کافی ہیں اس لیے یہ اپنی آبادی کی غذائی ضروریات پوری نہیں کر سکتیں۔

روزگار کے مواقع کی کمی
ناقص تعلیمی پالیسیوں کی وجہ سے، افراد میں ایسی مہارتوں کی کمی ہے جو انہیں کمانے میں مدد دے سکتی ہیں۔

حکومتوں کو تعمیراتی منصوبوں میں کوئی دلچسپی نہیں ہے جو انہیں روزگار کے مواقع فراہم کرنے میں مدد دے سکیں۔

تعلیم اور پالیسیوں سے روزگار کے مواقع کا اندازہ لگایا جا سکتا ہے۔

حکومتی پالیسیاں
لوگوں کے فائدے کے لیے فلاحی پالیسیاں اور معاشی مدد غربت میں کمی لا سکتی ہے۔

مزدوروں کی اجرتوں میں مناسب اضافہ بھی غربت کو ختم کر سکتا ہے۔

“ہماری ترقی کا امتحان یہ نہیں ہے کہ ہم ان لوگوں کی کثرت میں مزید اضافہ کرتے ہیں جن کے پاس بہت کچھ ہے۔ یہ ہے کہ کیا ہم ان لوگوں کے لئے کافی مہیا کرتے ہیں جن کے پاس بہت کم ہے۔

— فرینکلن ڈی روزویلٹ، ریاستہائے متحدہ کے 32 ویں صدر
آزاد منڈی کی پالیسیاں معاشی ترقی کو فروغ دے سکتی ہیں۔

معیشت مستحکم ہوگی تو غربت میں کمی آسکتی ہے۔ کسی بھی ریاست کی تصادم اور غیر مستحکم معیشت غربت کی علامت ہے۔

غربت فطری نہیں ہے جیسا کہ خود انسان کی وجہ سے ہے۔ اس کے اسباب کے خلاف جدوجہد اور جدوجہد سے اس پر قابو پایا جا سکتا ہے۔

غربت کے اثرات:
غربت کی وجہ سے غذائی قلت ہے کیونکہ بہت سے بچے بھوک کی وجہ سے مر رہے ہیں۔ غربت اور غذائیت کی کمی سب سے بڑی وجہ ہے جس کی وجہ سے دنیا بھر میں ہر سال 3.1 ملین بچے موت کے منہ میں چلے جاتے ہیں۔

ملین لوگ غربت کی وجہ سے ناقص غذائیت کا شکار ہیں۔ 822

کیا غربت جرائم کی ماں ہے؟
غربت چوری جیسے بہت سے جرائم کا سبب بنتی ہے۔

روزگار اور بنیادی مہارتوں کی کمی لوگ اپنی سماجی ضروریات کو پورا کرنے کے لیے اس برے راستے کا انتخاب کرتے ہیں۔

غربت اور مجرمانہ سرگرمیوں کا ایک دوسرے سے گہرا تعلق ہے۔ غربت جرائم کو جنم دیتی ہے۔ وہ لوگ جو بے روزگار ہیں اور اپنے خاندان کی بنیادی ضروریات پوری کرنے میں ناکام ہو سکتے ہیں وہ مجرمانہ سرگرمیوں میں ملوث ہو سکتے ہیں۔ غربت مجرمانہ کارروائیوں کے لیے افزائش گاہ فراہم کرتی ہے۔

غربت کا خاتمہ:
غربت کو اس طرح سے دور کیا جا سکتا ہے:

روزگار کے مواقع پیدا کرنا۔
پینے کے صاف پانی کی فراہمی
غذائیت کی کمی پر قابو پانا
مفت مارکیٹنگ کے اصول
بیداری کو بڑھانا اور نوجوانوں کو تعلیم دینا
بہتر معاشی پالیسیاں
اپنے کاروبار کو فروغ دینے کے بارے میں آگاہی.
اجرتوں میں اضافہ
تمام طبقات کے لیے معیشت کی مساوات
خواتین کو آزاد زندگی گزارنے کے لیے کمانے کے لیے بااختیار بنانا

Leave a Comment